غزل

مجھ کو دے دو سزائے پھانسی اب
بات حق تھی زباں پہ آئی ہے
ہم نے دامن بھرا ہے کانٹوں سے
تم نے پھولوں سے بیر کھائی ہے
دیکھو قاتل پھرے ہے آوارہ
موت حصے میں میرے آئی ہے
تہمتوں کا اثر کہاں ہوگا
ہم نے جینے کی قسم کھائی ہے
جاؤ تم سے قطع تعلق ہے
تم نے قیمت مری لگائی ہے
سارے نقد اور تبصرے ہم پر
کیا اسیری ہے کیا رہائی ہے
ہم نے کانٹوں کو روند ڈالا ہے
تم نے پھولوں سے چوٹ کھائی ہے
آنسوؤں سے فضا معطر ہے
کیا سحر نے غزل سنائی ہے

نجم السحر، الجامعۃ الاسلامیۃ شانتاپرم کیرلا

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

x

Check Also

سلسلہ اقبال شناسی،1

ڈاکٹر حسن رضا ولایت پادشاہی علم اشیاء کی جہاں گیری                       یہ سب ...