بنیادی صفحہ / ایس آئی او / عثمانیہ یونیورسٹی میں نیوزی لینڈ دہشت گردانہ حملہ کے شہداکے لئے ادا کی گئی غائبانہ نماز جنازہ
Credit: The Hindu

عثمانیہ یونیورسٹی میں نیوزی لینڈ دہشت گردانہ حملہ کے شہداکے لئے ادا کی گئی غائبانہ نماز جنازہ

عصر کا وقت تھا شام‌ ڈھلنے لگی تھی سورج مغرب میں جھکنے لگا تھا جب ہم سب آرٹس کالج کے سامنے سبزہ زار اسٹوڈنٹس اسلامک آرگنائزیشن کی سرپرستی میں غایبانہ نماز جنازہ کے لئے جمع ہوئے ہمارے ساتھ اظہار یگانگت کے لئے مختلف طلبہ تنظیمیں موجود تھیں نماز عصر کے ساتھ ہی غائبانہ نماز جنازہ پڑھی گئی اک افسردگی فضا پر چھائی ہوئی تھی یا ہم کو ہی لگ رہی تھی ورنہ نیوزی لینڈ کے کرسٹن چرچ میں “انسانوں” کی ہلاکت پر خوشیاں بھی منائی گئی میں نے جان بوجھ کر “انسانوں” کا لفظ استعمال کیا ورنہ انکی شناخت کے لئے اک اور لضظ بھی ہے “مسلمان”اور یہی شناخت ان کے قتل کا سبب بنا اور اسی لفظ کو قاتل نے دلیل صفائی کے طور پر استعمال کیانیوزی لینڈ کا یہ بہیمانہ واقعہ صرف اک نہیں ہے بلکہ یہ تو زنجیر کی وہ کڑی ہے جو پھٹ کر باہر نکلااسی لفظ “مسلمان”کو ساری دنیا میں اک منصوبہ بند طریقے سے دوسرے انسانوں میں خوف پھیلانے کے لئے زور وشور سے استعمال کیا جارہا ہے


یہ سوچ جس سے کسی خاص وضع یا خاص لباس اور زبان کو دہشت گرد یا ڈرایا جارہا ہے خود کو برتر یا دوسروں کو کمتر سمجھنا اور نسلی برتری کا جنون اس مہذب سماج کے لیے اک کلنک ہے اسلاموفوبیا یا نسلی برتری کا جنون کا مقابلہ صرف حکومت یا قوانین بنانے سے نہیں ہوگا یہ سوچ بمقابلہ سوچ ہے اور تعلیمی ادارے اس کے لئے بہترین جگہ ہے SIOنے اسکی اہمیت کو سمجھا اور دوسرے طلبہ تنظیموں سے ملکر اک اور کامیاب کوشش کی سبھی مقررین نے اپنی بات رکھی کہ حملہ بزدلانہ ہے اور دنیا کو اس طرح کے حملوں سے محفوظ رکھنا ہےسورج مغرب میں ہونے لگاتھا کہ یہ محفل اختتام کو پہنچی اس امید کے ساتھ کہ پھر نیا سورج طلوع ہوگا اور اک دن ضرور اس دنیا‌ میں سارے انسان برابر ہونگے

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

x

Check Also

انتخابی موسم میں ٹوئٹر پر ایک تعمیری ہاش ٹیگ

انتخابات کے ایک گرم موسم میں جہاں مختلف سیاسی جماعتیں، ان کے ...