Home / متفرق / نظم

نظم

کھا نہ دھوکا گردش ایام سے
اب تو کٹتی ہے بڑے آرام سے

آزمالے اے ستم گر سارے تیر
تجھکو ڈر لگتا ہے گر اسلام سے

گائے تو ایک جانور ہے برہمن
کیا غرض اس کو رحیم و رام سے

میکدے میں شیخ صاحب السلام
بیٹھئے فرمائیے، کس کام سے

عشق کرنا ہے اگر بے خوف کر
کس لئے ڈرتا ہے تو انجام سے

آج بھی شاکرؔ وہی مطلوب ہے
زندگی بدلی تھی جس پیغام سے
شاکرؔ حسین ہریانہ۔الجامعہ شانتاپرم۔

About admin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

نہیں ہے اپنی خودی کے مقام سے آگاہ

  رات کی تاریکی مکمل طور سے اپنی چادر اوڑھے ہوئے ہے۔ ...